Bin Tere Sanam By Laiba Sami

 

Novel : Bin Tere Sanam Novel Complete Pdf  
Writer Name : Laiba Sami

Mania team has started  a journey for all social media writers to publish their Novels and short stories. Welcome To All The Writers, Test your writing abilities.
They write romantic novels, forced marriage, hero police officer based Urdu novel, suspense novels, best romantic novels in Urdu , romantic Urdu novels , romantic novels in Urdu pdf , full romantic Urdu novels , Urdu , romantic stories , Urdu novel online , best romantic novels in Urdu , romantic Urdu novels
romantic novels in Urdu pdf, Khoon bha based , revenge based , rude hero , kidnapping based , second marriage based,
Bin Tere Sanam Novel Complete Pdf Novel Complete by 
Laiba Sami is available here to download in pdf form and online reading.

$ads={2}
 

وہ زمین پر بیٹھی اور اسکے جوتے اتارنے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ کیا کر
رہی ہو تم عیسیٰ نے فورن سے پاوں ہٹائے۔۔۔۔۔۔۔۔ آپکے شووز اتار رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔
اسنے اپنی بات رکھی۔۔۔۔۔۔ کیا تمہارا دماغ جگہ پر ہے یہ کام میں خود بھی کر سکتا
ہوں آئندہ یہ مت کرنا ۔۔۔۔۔۔ لہجہ کسی بھی جزبات سے عاری تھا۔۔۔۔۔۔۔۔مگر مجھے اچھا
لگتا ہے آپکے کام کرنا۔۔۔۔۔۔۔ بے اختیار زرینہ کے منہ سے پھسلا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ افف مگر
مجھے اچھا نہیں۔ لگتا کہ تم میرے کوئی بھی کام کرو ۔۔۔۔۔ اس نے لہجہ میں سختی
لائی۔۔۔۔۔۔۔۔تو زرینہ کے چہرے پر ناگواری اتر آئی اور وہ سیدھا کمرے کی جانب بڑھ
گئی۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک الگ ہی ڈرامے ہوتے ہیں گھر میں میرے۔۔۔۔۔۔۔ اسنے کوفت بھرے لہجے
میں کہا۔۔۔۔۔۔۔ اور خود بھی کمرے کی جانب بڑھا۔۔۔۔۔۔۔ کمرے میں داخل ہوا تو وہ
بچوں کی طرح رو رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عیسیٰ نے اپنے سر پر ہاتھ رکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک
ٹھنڈی سانس بھری اسنے اگنور کرنا چاہا مگر دل تھا کہ بغاوت پر تلا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
آخر پیر پٹختا ہوا اسکے پاس آیا۔۔۔۔۔۔ زریں میری بات سنو۔۔۔۔۔۔۔ وہ اسکے سامنے
براجمان ہوا۔۔۔۔۔ دیکھو ۔۔۔۔۔۔ رو نہیں ۔۔۔۔۔۔ زرینہ نے اپنی نظریں عیسیٰ پر
گاڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔ تو وہ جو پہلے ہی بے سکون۔تھا اور ہوگیا۔۔۔۔۔۔۔ وہ کیا کہتا اسے
سمجھ نہیں آرہا تھا۔۔۔۔۔۔۔میں کیا کروں عیسیٰ مجھے سمجھ نہیں آرہا یہ آنسوں مجھے
کیوں آرہے ہیں میں خود نہیں جانتی۔۔۔۔۔۔ کیا آپکی بے رخی مجھے تکلیف دینے لگی
ہے۔۔۔۔۔۔۔ اسنے دل میں سوچا۔۔۔۔۔۔۔ اور نظریں عیسیٰ پر تھی آنکھوں سے موتی جیسے
آنسو گر رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ اب بھی وہیں بیٹھا تھا دونوں کی زبان تالوں سے چپک
گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔ کمرا خاموشی میں ڈوبا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ شاید دونوں کے پاس الفاظوں
کی کمی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ زریں یہ رشتہ بس ایک سمجھوتہ ہے۔۔۔۔۔۔ اس میں محبت نہیں
ہوسکتی ۔۔۔۔۔۔ میں جب تک برداشت کر رہا ہوں تب تک یہ رشتہ ہے میں نہیں جانتا میری
برداشت کہاں تک میرا ساتھ دیگی۔۔۔۔۔۔۔۔ میں نے یہ نکاح صرف بی جان کے کہنے پر کیا
ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن میں نہیں چاہتا کہ تم کسی قسم کی امید باندھو مجھ سے۔۔۔۔۔۔ میں
بہت برا ہو زریں میرا دل کے مقام پر پہلے ہی کوئی قابض ہے وہ مقام میں کسی کو نہیں
دے سکتا۔۔۔۔۔۔۔۔ میری پہلی اور آخری محبت میں کر چکا ہوں کسی سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور شاید
مجھے اب دوبارہ محبت نہ ہو کسی سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بہت جلد اس رشتے سے آزادی مل جائے گی
تمہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور میں تمہیں اکیلا نہیں چھوڑوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔ اپنی یہ دولت میں
تمہارے نام لکھ دوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ علحیدگی کے بعد تم جس سے چاہو شادی کرو جہاں مرضی
چاہے جاو۔۔۔۔۔۔ میں تمہیں نہیں روکوں گا۔۔۔۔۔۔۔ نظریں اب زمین پر تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عیسیٰ کی یہ باتیں اسے تیر کی طرح لگیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور آزادی والی بات پر تو اسکے
جسم نے اسکا ساتھ چھوڑ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا رشتے آپکے لیے مزاق ہیں ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کہ جب دل چاہا نکاح کیا اور جب دل چاہا زندگی سے نکال دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا آپکو
رشتے مزاق لگتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا آپ ان رشتوں میں موجود کشش کو نہیں پہنچان
سکتے۔۔۔۔۔ وہ۔غصے میں ناجانے کیا بول رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔ اگر آپکو طلاق ہی دینی ہے تو
کیوں اپنا عادی بنا رہے ہیں مجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیوں اس رشتے سے باندھ رکھے
ہیں۔۔۔۔۔۔۔ کیا آپ اس ساحرہ کی جانے کی سزا اپنے سے جڑے ہر شخص کو دینگے۔۔۔۔۔۔۔
ساحرہ کے نام پر عیسیٰ کے اوسان خطا ہوئے۔۔۔۔۔۔۔ تم اسے کیسے جانتی عیسیٰ نے اسے
بازو سے پکڑ کر کھڑا کیا۔۔۔۔۔۔۔۔جانتی ہوں میں سب جانتی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔ میں ہی پاگل
تھی جو آپکو ماضی کی یادوں سے نکالنے کے لیے پاگل ہورہی تھی آپ جیسا شخص تو اپنے
ماضی سے باہر آنا ہی نہیں چاہتا۔۔۔۔۔۔۔ میری بلا سے کچھ بھی کریں آپ یہ کہہ کر وہ
کمرے سے باہر نکل گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔جبکہ سارم وہیں بت بنے کھڑا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Click on the link given below to Free download Pdf
It’s Free Download Link

Media Fire Download Link

Click Now 


$ads={1}
Online Reading


Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *