Mujhe Azmany Waly Mujhy Azma ker Roye By Zariya

Novel : Mujhe Azmany Waly Mujhy Azma ker Roye  
Writer Name : Zariya

Mania team has started  a journey for all social media writers to publish their Novels and short stories. Welcome To All The Writers, Test your writing abilities.
They write romantic novels, forced marriage, hero police officer based Urdu novel, suspense novels, best romantic novels in Urdu , romantic Urdu novels , romantic novels in Urdu pdf , full romantic Urdu novels , Urdu , romantic stories , Urdu novel online , best romantic novels in Urdu , romantic Urdu novels
romantic novels in Urdu pdf, Khoon bha based , revenge based , rude hero , kidnapping based , second marriage based,
Mujhe Azmany Waly Mujhy Azma ker Roye Novel Complete by 
Zariya is available here to download in pdf form and online reading.

$ads={2}
 

سوہا کا سانس اتنی سیڑھیاں چڑھنے کے باعث پھول رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
آہٹ پر سالک حیدر پلٹنے کو تھا ہی کہ وہ سالک حیدر کی پشت سے لگ گئی اور ساتھ ہی
اپنا چوڑیوں بھرا ہاتھ اس کے گرد باندھ دیا۔ اس کا نرم گرم سا لمس سالک حیدر کے
جذبات کی دنیا میں ہلچل مچانے لگا۔ حیدر سائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس نے پیچھے سے اس کے
شانے پر ٹھوری ٹکا کر اسے پکارا۔ بولو حیدر سائیں کی زندگی ۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ اپنے گرد
بندھے اس کے دونوں ہاتھ پکڑ انہیں باری باری چومتے ہوئے بولا تو سوہا کا چہرہ سرخ
ہونے لگا۔ ٹھنڈی ٹھنڈی پرکیف ہوائیں چل رہی تھیں،، چاندنی رات تھی، چاند کی روشنی
پوری فضا کو منّور کر رہی تھی۔ آج یہیں سوئیں گے کیا ؟ اس نے پوچھا۔ بالکل،، آج ہم
یہیں رات گزاریں گے ۔۔۔۔۔۔ دیکھو نا کتنا خوبصورت سماں ہے ۔۔۔۔۔ میں تم اور ہماری
محبّت بس !!! ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مخمور لہجے میں بولتا وہ اس کی جانب پلٹا تو وہ بلش کرتا
چہرہ جھکا گئی۔ اور پھر اپنی شرم چھپانے کو چھت پر موجود جھولے پر جا کر بیٹھ گئی
۔۔۔۔۔۔ اس کی ادا سالک حیدر بالوں میں ہاتھ پھیر کے مسکراہٹ ضبط کرتا اس کی جانب
بڑھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔ اور جھولے پر لیٹ کر اس کی گود میں اپنا سر رکھ لیا آنکھیں موند
لیں۔ حیدر سائیں ۔۔۔۔۔۔ اگر چھت پر کوئی آ گیا پھر ؟ اس کے گھنے بالوں میں ہاتھ
پھیرتی وہ شرم سے لب دانتوں دبائے بولی کوئی نہیں ائے گا ۔۔۔۔۔ اور جو آئے گا وہ
خود ہی لوٹ جائے گا ۔۔۔۔۔۔۔ بھاری لہجے میں بولتا وہ اس کے سر کو ہلکے سے پکڑ کر
خود پر جھکا گیا ۔۔۔۔۔۔۔ سوہا کی سانسیں بے ترتیب سی ہونے لگیں ۔۔۔۔۔ کچھ دیر کے
بعد اپنی گردن پر اس کے لبوں کا لمس محسوس کرتے وہ بے تحاشہ دہکتے چہرے کیساتھ خود
میں سمٹ گئی۔ چوڑیوں نے عجب شور برپا کر رکھا تھا۔ ح،، حیدر سائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ بے
تحاشہ دھڑکتے دل و سانسوں کی تاروں کو سیدھے راستے پر لانے کی کوشش میں ہلکان وہ
شرم سے چور چور ہو گئی۔ تھوڑی دیر بعد اس نے سر اوپر اٹھایا تو بنا سالک حیدر کی
جانب دیکھے دونوں ہاتھوں میں چہرہ چھپا گئی ۔۔۔۔۔۔۔ پورا جسم مارے حیا کے کانپ رہا
تھا۔ اس کی حالت دیکھ کر سالک حیدر بیساختہ ہنس پڑا ۔۔۔۔ اور وہ اپنا تنفس درست
کرنے کی کوشش میں بیحال سی اسے دیکھنے لگی تو اس کی بولتی و مسکراتی آنکھوں کو
دیکھکر کانوں کی لوؤں تک سرخ ہو گئی پھر خجالت بھرے انداز میں اس کے کشادہ سینے پر
مُکا مارا تو وہ قہقہ لگا بیٹھا۔ اس نے اس کا نازک ہاتھ پکڑ کر اس کی مہندی دیکھنے
لگا اور پھر پورے جذب سے اس کی ہتھیلی چوم لی۔

Click on the link given below to Free download Pdf
It’s Free Download Link

Media Fire Download Link

Click Now 


$ads={1}
Online Reading

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *