Uraan Novel By Qanita Khadija

Novel : Uraan Novel

Writer Name : Qanita Khadija

Mania team has started  a journey for all social media writers to publish their Novels and short stories. Welcome To All The Writers, Test your writing abilities.
They write romantic novels, forced marriage, hero police officer based Urdu novel, suspense novels, best romantic novels in Urdu , romantic Urdu novels , romantic novels in Urdu pdf , full romantic Urdu novels , Urdu , romantic stories , Urdu novel online , best romantic novels in Urdu , romantic Urdu novels
romantic novels in Urdu pdf, Khoon bha based , revenge based , rude hero , kidnapping basad , second marriage based,
Uraan Novel Novel Complete by Qanita Khadija is available here to download in pdf form and online reading.


شایان
تو اب بیچانی سے دل کے نیچے آنے کا انتظار کرنے لگ گیا، جیسے ہی وہ نیچے اتری
اسکا بازو پکڑے وہ اسے ایک کونے میں لے گیا۔
’’کیا
مصیبت ہے بازو چھوڑو میرا‘‘ اسکے ہاتھ سے اپنا بازو چھڑوانے کی ناکام کوشش کرتے وہ
پھنکاری
’’ ناراض ہوں؟‘‘ اسنے سوال کیا ’’میں تمہارے سوال کا جواب دینا ضروری نہیں
سمجھتی‘‘ وہ چیخی
’’ آواز نیچی دل ورنہ میں لحاظ نہیں کروں گا‘‘
انگلی اٹھائے شایان نے وارن کیا
’’ہاں میں ڈر گئی‘‘ دونوں بازو اٹھائے وہ ڈرنے کی
ایکٹینگ کرتے بولی
’’یہاں کیا کر رہی ہوں‘‘ لہجہ دھیما رکھے اسنے
پوچھا
’’کیا مطلب کیا کر رہی ہوں نظر نہیں آرہا ہے کہ
شادی میں آئی ہوں‘‘ کندھے اچکائے وہ مزے سے بولی
’’کس
حیثیت سے‘‘ اسکے قریب آتے وہ بولا
’’کیا مطلب کس حیثیت سے‘‘ اسنے اچھنبے سے پوچھا ’’مطلب صاف ہے دل یہاں تمہارا میرے علاوہ کون ہے
جو تم یہاں مزے سے گھومتی پھر رہی ہوں کیونکہ جہاں تک مجھے یاد ہے میں تواپنی بیوی
کو نہیں لایا تھا ساتھ‘‘ اسکے چہرے پر جھولتی آوارہ لٹ کو کان کے پیچھے کیے چہرہ
اسکے چہرے کے قریب کرتے اسنے پوچھا، ناجانے کیوں مگر دل کی آنکھیں نم ہوگئی
’’دور رہ کر بات کروں مجھ سے، اور بیوی کون سی
بیوی؟ وہی جس پر تمہیں شک ہے کہ وہ تمہاری پیٹھ پیچھے گلچھڑے اڑاتی پھر رہی ہوں‘‘
اسے خود سے پرے دھکیلتے وہ اونچی آواز میں چلائی جبکہ شایان ہاتھ بالوں میں پھیر
کر رہ گیا۔
’’دل۔۔ دل تمہارا دماغ خراب ہو گیا ہے، کیا بکواس
کر رہی ہوں، آئیندہ سے اگر اپنے منہ سے ایسے الفاظ نکالے تو دیکھنا وہ حشر کروں
گا کہ تم دیکھتی رہ جاؤ گی۔ شرم نہیں آتی خود کے لیے ایسے الفاظ استعمال کرتے
ہوئے
‘‘
’’
کیوں کیوں چپ کروں
تمہیں شرم نہیں آتی تو مجھے کیوں آئے‘‘ آخر میں اسکی آواز بھیگ گئی۔

Click on the link given below to Free download Pdf
It’s Free Download Link

Media Fire Download Link

Click Now 


$ads={1}

ONLINE READING

$ads={2}


Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *