Man Musafir By Qanita khadija

Novel : Man Musafir

Writer Name : Qanita Khadija

Mania team has started  a journey for all social media writers to publish their Novels and short stories. Welcome To All The Writers, Test your writing abilities.
They write romantic novels, forced marriage, hero police officer based Urdu novel, suspense novels, best romantic novels in Urdu , romantic Urdu novels , romantic novels in Urdu pdf , full romantic Urdu novels , Urdu , romantic stories , Urdu novel online , best romantic novels in Urdu , romantic Urdu novels
romantic novels in Urdu pdf, Khoon bha based , revenge based , rude hero , kidnapping basad , second marriage based,
Man Musafir Novel Complete by Qanita Khadija is available here to download in pdf form and online reading.

 

وہ۔۔۔۔وہ مجھے آپ کی مدد چاہیے؟” عبداللہ
زرا سا ہچکچایا
کیسی مدد؟” ہالا نہ آنکھیں چھوٹی کیے پوچھا وہ سٹاٹس میں مدد چاہیے۔۔۔ دراصل میرا میتھس کمزور ہے اور
سٹاٹس بھی اچھے سے نہیں کرپاتا۔۔۔۔ اسی لیے” ہالا کے چہرے کے اتار چڑھاؤ دیکھ
کر وہ بہت مہذب طریقے سے بولا
تو کیا آپ میری مدد کرے گی؟” اسنے معصوم چہرہ بنائےآس سے
پوچھا
نہیں” لمبی سانس کھینچے ہالا خود کو پرسکون کرتے بولی وجہ؟” عبداللہ کو اس پر غصہ تو آیا مگر ضبط کرگیا وجہ؟۔۔۔۔ وجہ یہ ہے کہ مجھے سموکرز پسند نہیں خاص طور پر چین
سموکرز۔۔۔۔ اور آپ تو ماشااللہ۔۔۔۔ اور ویسے بھی میرے نزدیک سیگرٹ پینے والے لوگوں
کا کریکٹر کچھ خاص اچھا نہیں ہوتا۔۔۔ پھر چاہے وہ عورت ہوں یا مرد”اسکے سیگرٹ
پینے پر ہالا نے چوٹ کی تو عبداللہ تلملا کر رہ گیا
یہ کوئی بڑی وجہ نہیں کسی کو ناپسند کرنے کی۔۔۔ یا کسی سے
نفرت کرنے کی” وہ دانت پیستے بولا
میرے لیے تو یہ بہت بڑی وجہ ہے۔۔۔۔ جیسے آپ کو حجابیوں سے
نفرت ہیں ۔۔۔ بلکل اسی طرح مجھے سموکرز سے ہیں۔۔۔۔ جیسے آپ کے نزدیک ہر حجابی لڑکی
کردار کی ہلکی ہوتی ہے۔۔ بلکل اسی طرح میرے نزدیک سیگرٹ پینے والے تمام مرد کردار
کے ہلکے ہیں۔۔۔۔ ہوپ سو کہ آپ کو میری بات سمجھ میں آگئی ہوگی” کہتے ہی وہ
اندر جانے کو بڑھی جب ایک دم رکی اور عبداللہ کی جانب مڑی
اور ہاں ایک اور بات۔۔۔۔ اپنی بےجا انا اور فضول کی شرط میں
عورت کا استعمال کرنے والا مرد۔۔۔ میری نظر میں مرد کہلانے کے قابل نہیں۔۔۔۔تو
آئندہ سے اپنی شرط اپنے تک ہی رکھیے گا۔۔۔ کسی بےضرر وجود کو اس میں گھسیٹنے کی
ضرورت نہیں” ہالا پرسکون لہجے میں بولتی عبداللہ کو چونکا گئی جو آنکھیں حیرت
سے بڑی کیے اسے تک رہا تھا


Click on the link given below to Free download Pdf
It’s Free Download Link

Media Fire Download Link

Click Now 


$ads={1}

ONLINE READING

$ads={2}

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *